قیاس و یاس کی حد سے نکل کر| یاسمین حمید |

قیاس و یاس کی حد سے نکل کر| یاسمین حمید |
قیاس و یاس کی حد سے نکل کر| یاسمین حمید |

  

قیاس و یاس کی حد سے نکل کر

چلی جاؤں کہیں چہرہ بدل کر

اُڑے گی راکھ پھر میری ہوا میں

سُبک رفتار ہوجاؤں گی جل کر

طلسمِ مہر و مہ کو توڑ ڈالے

زمیں اپنی حرارت سے پگھل کر

ابھی پہلا قدم طے کر رہی ہوں

دوبارہ گر پڑی تھی میں سنبھل کر

رہیں پھولوں بھرے رستے سلامت

سفر کاٹوں گی انگاروں پہ چل کر

مرے عطار نے خوشبو  بنائی

بہت معصوم پھولوں کو مسل کر

شاعرہ: یاسمین حمید

 ( شعری مجموعہ:دوسری زندگی؛سالِ اشاعت،2007)

Qayaas -o-Yaas   Ki   Hadd   Say   Nikal   Kar

Chali   Jaaun   Kahen   Chehra   Badal   Kar

 Urray   Gi   Raakh   Phir   Meri   Hawaa   Men

Subak   Raftaar   Ho   Jaaun   Gi   Jall   Kar

 Talism -e-Mehr-o-Mah   Ko   Torr   Daalay

Zameen   Apni   Haraarat   Say   Pighal   Kar

 Abhi   Pehla   Qadam   Tay   Kar   Rahi   Hun

Dobara   Gir   Parri   Thi   Main   Sanbhal   Kar

 Rahen   Phoolon   Bharay   Rastay   Salaamat

Safar   Kaatun   Gi   Angaron   Pe   Chall   Kar

 

Miray   Attaar   Nay    Khushbu   Banaai

Bahut    Masoom   Phoolon  Ko   Masal   Kar 

Poetess: Yasmeen   Hameed

 

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -