خواب نگر ہے آنکھیں کھولے دیکھ رہا ہُوں

خواب نگر ہے آنکھیں کھولے دیکھ رہا ہُوں
خواب نگر ہے آنکھیں کھولے دیکھ رہا ہُوں

  

خواب نگر ہے آنکھیں کھولے دیکھ رہا ہُوں

اُس کو اپنی جانب آتے دیکھ رہا ہُوں

کس کی آہٹ قریہ قریہ پھیل رہی ہے

دیواروں کے رنگ بدلتے دیکھ رہا ہُوں

کون مِرے جادو سے بچ کر جاسکتا ہے

آئینہ ہُوں، سب کے چہرے دیکھ رہا ہُوں

دروازے پر تیز ہَواؤں کا پہرا ہے

گھر کے اندر چُپ کے سائے دیکھ رہا ہُوں

جیسے میرا چہرہ میرے دُشمن کا ہو

آئینے میں خُود کو ایسے دیکھ رہا ہُوں

منظر منظر ویرانی نے جال تنے ہیں

گلشن گلشن بِکھرے پتّے دیکھ رہا ہُوں

منزل منزل ہَول میں ڈُوبی آوازیں ہیں

رستہ رستہ خوف کے پہرے دیکھ رہا ہُوں

شہرِ سنگدلاں میں امجد ہر رستے پر

آوازوں کے پتّھر چلتے دیکھ رہا ہُوں

شاعر: امجد اسلام امجد

Khaab Nagar Hay Aankhen Kholay Dekh Raha Hun

Uss Ko APni Jaanib Aatay Dekh Raha Hun

Kiss Ki Aahat Qarya Qrya Phail Rahi Hay

Dewaaron K Rang Badaltay Dekh Raha Hun

Kon Miray Jaadu Say Bach Kar Ja Sakta Hay

Aaina Hun, Sab K Chehray Dekh Raha Hun

Darwaazay PAr Tez HAwaaon Ka Pehra Hay

Ghar K Andar Chupp K Saaey Dekh Raha Hun

Jesay Mera Chehra Meray Dushman Ka Ho

Aainay Men Khud Ko Aisay Dekh Raha Hun

Manzar Manzar Weraani Nay Jaal Tanay Hen

Gulshan Gulshan Bikhray Patay DEkh Raha Hun

Manzil Manzil Haol Men Doobi Awaazen Hen

Rasta Rasta Khaof  K Pehray Dekh Raha Hun

Shehr e Sangdilan Men AMJAD HAr Rastay Par

Awaazon K Pathar Chaltay Dekh Rah Hun

Poet: Amjad Islam Amjad

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -