دل سے نکلی جو درد کی آواز | جگر بریلوی |

دل سے نکلی جو درد کی آواز | جگر بریلوی |
دل سے نکلی جو درد کی آواز | جگر بریلوی |

  

دل سے نکلی جو درد کی آواز

کھل گیا مجھ پہ زندگی کا راز

خوگرِ لطف کر دیا تم نے

کون اٹھائے ستم گری کے ناز

رکھ دیا سر کسی کے قدموں میں

کاش نکلے یہی طریقِ نیاز

ہنستے ہنستے رُلا دیا تم نے

چھیڑ کر میرا ماجرائے ناز

دم قفس میں نکل گیا آخر

ہائے میں اور حسرتِ پرواز

بندگی کرنے پر جب آئے تو کیا

کہیں رکھ دی جگر جبینِ نیاز

شاعر: جگر بریلوی

(مجموعہ کلام: نالۂ جاں سوز؛سال اشاعت،1927 )

Dil   Say   Nikli   Jo   Dard   Ki   Awaaz

Khul   Gaya   Mujh   Pe   Zindagi   Ka   Raaz

Khoogar -e-Lutf    Kar   Diya   Tum   Nay

Kon   Uthaaey   Sitam   Gari   K Naaz

Rakh   Diya   Sar   Kisi   K   Qadmon   Men

Kaash   Milay   Yahi   Tareeq-e-Nayaaz

Hanstay   Hasntay   Rulaa   Diya   Tum   Nay

Chairr   Kar   Mera   Maajraa-e-Nayaaz

Dam  Qafass   Mern   Nikall   Gaya   Aakhir

Haaey   Main   Aor   Hasrat-e- Parwaaz

Bandagi   Karnay   Par   Jab   Aaey   To   Kaya

Kahen   Rakh   Di JIGAR   Jabeen-e-Nayaaz

Poet: Jigar   Barelvi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -