تجھ سے مل کر تو یہ لگتا ہے کہ اے اجنبی دوست

تجھ سے مل کر تو یہ لگتا ہے کہ اے اجنبی دوست
تجھ سے مل کر تو یہ لگتا ہے کہ اے اجنبی دوست

  

تجھ سے مل کر تو یہ لگتا ہے کہ اے اجنبی دوست

تو مری پہلی محبت تھی مرے آخری دوست

لوگ ہر بات کا افسانہ بنا دیتے ہیں

یہ تو دنیا ہے مری جاں کئی دشمن کئی دوست

تیرے قامت سے بھی لپٹی ہے امربیل کوئی

میری چاہت کو بھی دنیا کی نظر کھا گئی دوست

یاد آئی ہے تو پھر ٹوٹ کے یاد آئی ہے

کوئی گزری ہوئی منزل کوئی بھولی ہوئی دوست

اب بھی آئے ہو تو احسان تمہارا لیکن

وہ قیامت جو گزرتی تھی گزر بھی گئی دوست

تیرے لہجے کی تھکن میں ترا دل شامل ہے

ایسا لگتا ہے جدائی کی گھڑی آ گئی دوست

بارش سنگ کا موسم ہے مرے شہر میں تو

تو یہ شیشے سا بدن لے کے کہاں آ گئی دوست

میں اسے عہد شکن کیسے سمجھ لوں جس نے

آخری خط میں لکھا تھا کہ فقط آپ کی دوست

شاعر: احمد فراز

Tujh Say Mill Kar To Yeh Lagta Hay Keh Ay Ajnabi Dost

                                         Tu Miri Pehli Muhabbat Thi Miri Aakhri Dost

                                                              Log har baat Ka Fsaan Banaa Detay Hen

          Yeh To Dunya Hay Miri Jaan Kai Dushaman Kai Dost

                                 Teray Qaamat Say Bhi Liptti Hay Amarbail Koi

             Meri Chaahat Ko Bhi Dunya Ki Nazar Khaa gai Dost

                                         Yaad aaee Hay To Phir Toot K Yaad Aaee Hay

                                                 Koi Guzri Hui Manzil Koi Bhooli Hui Dost

                                            Ab Bhi Aaey Ho To Ehsaan Tumhaara Lekin

                         Wo Qayaamat Jo Guzarni Thi Guzar Bhi Gai Dost

                     Teray Lejay Ki Thakan Men Tera Dil Shaamil Hay

                                   Aisa Lagta Hay Judaaee Ki Gharri Aa gai Dost

             Baarish  e  Sang Ka Mosam hay Miray Shehr Men To

        Tu Yeh Sheeshay Ka badan Lay K Kaahan aa  gai Dost

         Main Usay Ehd Shikan KAisay Samajh Lun Jiss Nay

        "Aakhri Khat Men Yeh Likha Tha faqat "Aap Ki   Dost

                                                                                                                                     Poet: Ahmad  Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -