ہجر کی شب ہے اور اُجالا ہے | خمار بارہ بنکوی |

ہجر کی شب ہے اور اُجالا ہے | خمار بارہ بنکوی |
ہجر کی شب ہے اور اُجالا ہے | خمار بارہ بنکوی |

  

ہجر کی شب ہے اور اُجالا ہے 

کیا تصور بھی لٹنے والا ہے 

غم تو ہے عینِ زندگی لیکن 

غم گساروں نے مار ڈالا ہے 

عشق مجبور و نا مراد سہی 

پھر بھی ظالم کا بول بالا ہے 

دیکھ کر برق کی پریشانی 

آشیاں خود ہی پھونک ڈالا ہے 

کتنے اشکوں کو کتنی آہوں کو 

اک تبسم میں اس نے ڈھالا ہے 

تیری باتوں کو میں نے اے واعظ 

احتراماً ہنسی میں ٹالا ہے 

موت آئے تو دن پھریں شاید 

زندگی نے تو مار ڈالا ہے 

شعر  ، نغمہ ،شگفتگی ، مستی 

غم کا جو رُوپ ہے نرالا ہے 

لغزشیں مسکرائی ہیں کیا کیا 

ہوش نے جب مجھے سنبھالا ہے 

دم اندھیرے میں گھٹ رہا ہے خمارؔ 

اور چاروں طرف اُجالا ہے 

شاعر: خمار بارہ بنکوی

 (شعری مجموعہ: رقصِ مے؛سال اشاعت،1981)

Hijr   Ki   Shab   Hay   Aor   Ujaala   Hay

Kaya   Tasawwar   Bhi    Luttnay   Wala    Hay

Gham   To   Hay    Ain-e-Zindagi    Lekin

Gham  Gusaaron   Nay   Maar   Daala   Hay

Eshq    Majboor -o- Naamuraad   Sahi

Phir   Bhi   Zaalim   Ka   Bol   Baala   Hay

Dekh   Kar   Barq   Ki   Pareshaani

Aashiyaan   Khud   Hi   Phoonk   Daala   Hay

Kitnay   Ashkon   Ko   Kitni   Aahon   Ko

Ik  Tabassun   Men   Uss   Nay   Dhaala   Hay

Teri   Baaton   Ko   Main   Nay   Waaiz

Ehtraaman   Hansi   Men   Taala   Hay

Sher  ,   Naghama  ,   Shaguftagi  ,   Masti

Gham   Ka   Jo   Roop   Hay   Niraala   Hay

Laghzashen    Muskaraai   Hen   Kaya   Kaya

Hosh   Nay   Jab   Mujhay   Sanbhaala   Hay

Dam   Andhairay   Men   Ghutt   Rah   Hay   KHUMAR

Aor   Chaaron   Taraff   Ujaala   Hay

Poet: Khumaar    Barabankavi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -