عیشِ امید ہی سے خطرہ ہے

عیشِ امید ہی سے خطرہ ہے
عیشِ امید ہی سے خطرہ ہے

  

عیشِ امید ہی سے خطرہ ہے

دِل کو اب دِل دہی سے خطرہ ہے

ہے کچھ ایسا کہ اُس کی جلوت میں

ہمیں اپنی کمی سے خطرہ ہے

جس کی آغوش کا ہوں دیوانہ

اُس کی آغوش ہی سے خطرہ ہے

یاد کی دُھوپ تو ہے روز کی بات

ہاں مجھے چاندنی سے خطرہ ہے

ہے عجب کچھ معاملہ درپیش

عقل کو آگہی سے خطرہ ہے

شہرِ ِ غدار !جان لے کہ تجھے

ایک امروہوی سے خطرہ ہے

میں کہوں کِس طرح یہ بات اُس سے

تجھ کو جانم مُجھی سے خطرہ ہے

آج بھی اے کنار ِ بان مجھے!

تیری اِک سانولی سے خطرہ ہے

اُن لبوں کا لہُو نہ پی جاؤں

اپنی تِشنہ لبی سے خطرہ ہے

جون ہی تو ہے جون کے درپے

مِیر کو مِیر ہی سے خظرہ ہے

اب نہیں کوئی بات خطرے کی

اِن سبھی کو سبھی سے خطرہ ہے

شاعر: جون ایلیا

Aish  e  Umeed Hi Say Khatra Hay

Dik Ko Ab Dildahi Say Khatra Hay

Hay Kuch Aisa Keh Uss Ki Jalwat Men

Hamen Apni Kami Say Khatra Hay

Jiss K Agosh Ka Hun Dewaana

Uss K Aaghosh Hi Say Khatra Hay

Yaad Ki Dhoop To Hay Roz Ki Baat

Haan Mujhay Chaandni Say Khatra Hay

Hay Ajab Kuch Muaamla Darpaish

Aql Ko Aaghi Say Khatra Hay

Shehr  e  Ghaddaar Jaan Lay Keh Tujhay

Aik Amrohavi Say Khatra Hay

Hay Ajab Tor   e  Haalat  e  Girya

Keh Muzaa Ko Nami Say Khatra Hay

Haal Khush Lakhnaw Ka Dilli Ka

Bass Unhen MUS,HAFI Say Khatra Hay

Aasmaanon Men Hay Khuda Tanha

Aor Har Aadmi  Say Khatra Hay

Main Kahun Kiss Tarah Ye Baat Uss Say

Tuj Ko Jaanum Mujhi Say Khatra Hay

Aaaj Bhi Ay Kinaar  e   Baan Mujhay

Teri Ik Saanwali Say Khatra Hay

Un Labon Ka Lahu Na Pi Jaaun

Apni Tashna Labi Say Khatra Hay

JAUN Hi To Hay JAUN K Darpay

MEER Ko MEER Hi Say Khatra Hay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -