تم جانو، تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو

تم جانو، تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو
تم جانو، تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو

  

تم جانو، تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو

مجھ کو بھی پوچھتے رہو تو کیا گناہ ہو

بچتے نہیں مواخذۂ روزِ حشر سے

قاتل اگر رقیب ہے تو تم گواہ ہو

کیا وہ بھی بے گنہ کش و حق نا شناس ہیں

مانا کہ تم بشر نہیں خورشید و ماہ ہو

ابھرا ہوا نقاب میں ہے ان کے ایک تار

مرتا ہوں میں کہ یہ نہ کسی کی نگاہ ہو

جب مے کدہ چھٹا تو پھر اب کیا جگہ کی قید

مسجد ہو، مدرسہ ہو، کوئی خانقاہ ہو

سنتے ہیں جو بہشت کی تعریف، سب درست

لیکن خدا کرے وہ تِرا جلوہ گاہ ہو

غالبؔ بھی گر نہ ہو تو کچھ ایسا ضرر نہیں

دنیا ہو یا رب اور مرا بادشاہ ہو

شاعر: مرزا غالب

Tum Jaano , Tum Ko Ghair Say Jo Rasm o Raah Ho

Mujh Ko Bhi Poochtay Raho To Kaya Gunaah Ho

Bachtay Nahen Muaakhza e Roz e Hashr Say

Qaatil Agar Raqeeb Hay To Tum Gawaah Ho

Kaya Wo Bhi Begunah Kash o Haq Na Shanaas Hen

Maana Keh Tum Bashar Nahen Khursheed o Maah Ho

Ubhra Hua Naqaab Men Hay Un K  Aik Taar

Marta Huna Main Keh Yeh Na Kisi Ki Nigaah Ho

Jab May Kada Chuta , To Phir Ab Kaya Jagah Ki  Qaid

Masjaid Ho, Mandar Ho , Koi Khaanqaah Ho

Suntay Hen Jo Bahisht  Ki Tareef Sab Darust

Lekin Khud Karay Wo Teri Jalwa Gaah Ho

GHALIB Bhi Gar Na Ho To Kuch Aisa Zarar Nahen

Dunya Ho Ya RAB, Aor Mira Baadshaah Ho

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -