نکتہ چین ہے غمِ دل اس کو سنائے نہ بنے

نکتہ چین ہے غمِ دل اس کو سنائے نہ بنے
نکتہ چین ہے غمِ دل اس کو سنائے نہ بنے

  

نکتہ چین ہے غمِ دل اس کو سنائے نہ بنے

کیا بنے بات، جہاں بات بنائے نہ بنے

میں بلاتا تو ہوں اس کو مگر اے جذبہ دل

اس پہ بن جائے کچھ ایسی کہ بن آئے نہ بنے

کھیل سمجھا ہے کہیں چھوڑ نہ دے بھول نہ جائے

کاش یوں بھی ہو کہ بن میرے ستائے نہ بنے

غیر پھرتا ہے لیے یوں ترے خط کو کہ اگر

کوئی پوچھے کہ یہ کیا ہے تو چھپائے نہ بنے

اس نزاکت کا برا ہو، وہ بھلے ہیں تو کیا

ہاتھ آویں تو انہیں ہاتھ لگائے نہ بنے

کہہ سکے کون کہ یہ جلوہ گری کس کی ہے

پردہ چھوڑا ہے وہ اس نے کہ اٹھائے نہ بنے

موت کی راہ نہ دیکھوں؟ کہ بن آئے نہ رہے

تم کو چاہوں؟ کہ نہ آئو تو بلائے نہ بنے

بوجھ وہ سر سے گرا ہے کہ اٹھائے نہ اٹھے

کام وہ آن پڑا ہے کہ بنائے نہ بنے

عشق پر زور نہیں، ہے یہ وہ آتش غالب

کہ لگائے نہ لگے اور بجھائے نہ بجھے

شاعر: مرزاغالب

Nukta Cheen Hay Gham e Dil Uss Ko Sunnaey Na Banay

Kaya Banay Baat  Jahan Baat Baanaaey Na Banay

Main Bulaata To Hun Uss Ko Magar Ay Jazba e Dil

Uss Pe  Ban Jaaey Kuchj Aiosi  Keh Bin Aaaey Na Banay

Khail Samjha Hay Kahen Chorr Na Day Bhool Na Jaaey

Kaash Yun Bhi Ho Keh Bin Meray Sataaey Na Banay

Ghair Phirta Hay Liay Yun Tiray Khat Ko Keh Agar

Koi Poochay Keh Yeh kaya Hay To Chupaaey Na Banay

Iss Nazaakat Ka Bura Ho Wo Bhalay Hen To Kaya

Haath Aaven To Unhen Haath Lagaaey Na Banay

Keh Sakay Kon Keh Yeh Jalwa Gari Kiss Ki Hay

Parda Chorra  Hay Uss Nay Keh Uthaaey Na Banay

Maot Ki Raah Na Dekhun Keh Bin Aaey Na Rahay

Tum Ko Chaahun Keh Na Aao To Bullaey Na Banay

Eshq Par Zor Nahen Hay Yeh Wo Aatish GHALIB

Keh Lagaaey Na Lagay  Aor Bujhaaey Na Banay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -