کرے ہے بادہ ، ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ 

کرے ہے بادہ ، ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ 
کرے ہے بادہ ، ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ 

  

کرے ہے بادہ ، ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ 

خطِ پیالہ ، سراسر نگاہِ گل چیں ہے 

کبھی تو اِس دلِ شوریدہ کی بھی داد ملے! 

کہ ایک عمر سے حسرت پرستِ بالیں ہے 

بجا ہے ، گر نہ سنے ، نالہ ہائے بلبلِ زار 

کہ گوشِ گل ، نمِ شبنم سے پنبہ آگیں ہے 

اسدؔ ہے نزع میں ، چل بے وفا ! برائے خدا! 

مقامِ ترکِ حجاب و وداعِ تمکیں ہے

شاعر: مرزا غالب

Karay Hay Baada  Tiray Lab Say Kasab e Rang e Farogh

Haz e Payaala Sara Sar Nigaah e Gulcheen Hay

Kabhi To Iss Dil e Shoreeda Ki Bhi Daad Milay

Keh Aik Umer Say Hasrat Parast e Baleen Hay

Baja Hay Gar Na Sunay Naala Haa e Bulbul e Zaar

Keh Gosh e Gull , Nam e Shabnam Say Panba Aageen Hay

ASAD Hay Naza Men Chall Bewafa Baraa e KHUDA

Maqaam e tTark e Hijaab o Vidaa e Tamkeen Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -