جہاں کچھ درد کا مذکور ہوگا  | جرأت قلندر بخش |

جہاں کچھ درد کا مذکور ہوگا  | جرأت قلندر بخش |
جہاں کچھ درد کا مذکور ہوگا  | جرأت قلندر بخش |

  

جہاں کچھ درد کا مذکور ہوگا 

ہمارا شعر بھی مشہور ہوگا 

جہاں میں حسن پر دو دن کے اے گل 

کوئی تجھ سا بھی کم مغرور ہوگا 

پڑیں گے یوں ہی سنگِ تفرقہ گر 

تو اک دن شیشۂ دل چور ہوگا 

مجھے کل خاک افشاں دیکھ بولا 

یہی عشاق کا دستور ہوگا 

ہوا ہوں مرگ کے نزدیک غم سے 

خدا جانے یہ کس دن دُور ہوگا 

وہی سمجھے گا میرے زخم دل کو 

جگر پر جس کے اک ناسور ہوگا 

ہمیں پیمانہ تب یہ دے گا ساقی 

کہ جامِ عمر   جب معمور ہوگا 

جو  یوں غمِ نیش زن ہر دم رہے گا 

تو پھر دل خانۂ زنبور ہوگا 

یہی رونا ہے گر منظور جرأتؔ 

تو بینائی سے تو معذور ہوگا 

شاعر: جرأت قلندر بخش

(دیوانِ جرأت: سالِ اشاعت،1912)

Jahan   Kuch   Dard   Ka   Mazkoor   Ho   Ga

Hamaara   Sher   Bhi   Mashoor   Ho   Ga

Jahan   Men   Husn   Par   Do   Din    K   Ay   Gull 

Koi   Tujh    Sa   Bhi   Kam   Maghroor   Ho   Ga

Parren   Gay   Yun   Hi   Sang-e- Tafarqa   Gar

To   IK   Din   Sheesha -e- Dil   Choor   Ho   Ga

Kall   Mujhay   Khaak -e- Afshaan   Dekh   Bola

Yahi   Ushaaq   Ka   Dastoor   Hay

Hua   Hun   Marg    K    Nazdeek    Gham   Say

Khuda    Jaanay   Yeh    Kiss     Din     Door   Ho   Ga

Wahi   Samjhay   Ga    Meray   Zakhm -e- Dil   Ko

Jigar   Par    Jiss    K    Ik    Nasoor   Ho   Ga

Hamen   Paimaana   Tab   Yeh   Day   Ga   Saaqi

Keh    Jaam -e- Umr   Jab   Mamoor   Ho   Ga

Jo   Yun    Gham-e- Naish    Zan   Har   Dam   Rahay   Ga

To   Phir    Dil   Khaana -e- Zanboor   Ho   Ga

Yahi   Rona   Hay   Gar   Manzoor   JURAT

To   Benaai   Say   Tu    Mazoor    Ho   Ga

Poet: Jurat    Qalandar    Bakhsh

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -