اُس کی نوازشوں نے تو حیران کر دیا

اُس کی نوازشوں نے تو حیران کر دیا
اُس کی نوازشوں نے تو حیران کر دیا

  

اُس کی نوازشوں نے تو حیران کر دیا

میں میزبان تھا مجھے مہمان کر دیا

اک نو بہارِ ناز کے ہلکے سے لمس نے

میرے تو سارے جسم کو گلدان کر دیا

کل اک نگارِ شہرِ سبا نے بہ لطف خاص

مجھ سے فقیر کو بھی سلیمان کر دیا

جینے سے اس قدر بھی لگاؤ نہ تھا مجھے

تو نے تو زندگی کو  مری جان کر دیا

قربت کے پل وہ اتنا سخی تھا خہ اس نے تو

پور اتمام عمر کا نقصان کر دیا

نا آشنائےلطفِ تصادم کو کیا خبر

میں نے ہوا کی زد پہ رکھا جان کر دیا

اتنے سکوں کے دن کبھی دیکھے نہ تھے فراز

آسودگی نے مجھ کو پریشان کر دیا

شاعر: احمد فراز

                       Uss Ki Nawaazshon Nay To Hairaan Kar Dia

             Main Maizbaan Tha Mujhay Mehmaan Kar Dia

                 Ik Nao Bahaar  e  Naaz K Halkay Say Lams Nay

                               Meray To Saaray Jism Ko Guldaan  Kar Dia

Kall Ik Nigaar   e  Shehr  e  Saba   Nay Ba Luf e  Kahaas

                                 Mujh Say Faqeer Ko Bhi Sulemaan Kar Dia

           Jeenay Say Iss Qadar Bhi Lagaao Na Tha Mujahy

                                        Too Nay To Zindagi Ko Miri Jaan Kar Dia

             Qurbat KPall Wo Itna Sakhi Tha Keh Uss Nay To

                                         Poora Tamaam Umr Ka Nuqsaan Kar Dia

                        Na Ashnaa  e  Lutf  e  Tasaadam Ko Kia Khabar

                 Main Nay Hawa Ki Zadd Pe Rakha Jaan Kar Dia

Itnay Sakoon K Din Kabhi Dekhay Na Thay FARAZ

                                    Asoodagi Nay Mujh Ko Pareshaan Kar Dia

                                                                                                                            Poet: Ahmad Faraz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -