آج کل کے نوجواں بنتے تو ہیں عاشق مزاج | دلاور فگار|

آج کل کے نوجواں بنتے تو ہیں عاشق مزاج | دلاور فگار|
آج کل کے نوجواں بنتے تو ہیں عاشق مزاج | دلاور فگار|

  

عشق کے مراحل

آج کل کے نوجواں بنتے تو ہیں عاشق مزاج

ان سے کیسے ہوگاادا عشق و محبت کا خراج

عاشقی کے راز سے تھے میرے آبا آشنا

کوہکن شیریں کا عاشق ،قیس لیلیٰ آشنا

یہ کسی سعدی کا فوٹو ہے نہ تصویرِ دمشق

یہ مرے دادا ہیں جو دادی سے فرماتے ہیں عشق

ایک علامت ہے یہ جھولا پیار کے اظہار کی

دیکھیے جھولے میں پینگیں بڑھ رہی ہیں پیار کی

دادے ابا گا رہے ہیں آ گئی ساون کی رُت

اور دادی اس طرح ساکت ہیں جیسے کوئی بت

پھر ہو اکچھ یوں کہ رُت بدلی جو اس برسات کی

میرے ابا جھول نکلے شاخ پر حالات کی

عاشقی اُس دور میں اک خاص کلچر کاتھا نام

عید کے دن لکھ کے جاتا تھا سویوں پر سلام

یا کسی دن دل میں جب اُٹھی محبت کی ترنگ

اپنی محبوبہ کے گھرمیں کاٹ دی اپنی پتنگ

ان دنوں بس میں نہیں جاتا تھا یہ جانِ بہار

پالکی میں مہوشوں کو لے کے جاتے تھے کہار

ان دنوں کانوں کے بندوں میں لٹک جاتا تھا دل

چلمنوں کی تیلیوں تک میں اٹک جاتا تھا دل

 اب بھی لوگوں کو وہ حسرت کا زمانہ یاد ہے

”وہ ترا کوٹھے پہ ننگے پاؤں آنا یاد ہے “

نسِ نو کا دورآیا ہے ، نئے عاشق بنے

اب سویوں کی جگہ چلنے لگے چھولے چنے

شیوۂ عشاق اب بازی گری بنے لگا

عشق جو اک آرٹ تھا انڈسڑی بنے لگا

ان کے بچے بھی کریں گے دورِ مستقبل میں عشق

مختلف صورت سے پیدا ہوگا اُن کے دل میں عشق

عشق کمپیوٹر سے پوچھے گا مجھے یہ تو بتا

کیا ہے میری بی لوڈ کا نام اور گھر کا پتا

اس کمپیوٹر سے مل جائے گا یہ مثبت جواب

تیری محبوبہ فلاں لڑکی ہے کر لے انتخاب

حسن کمپیوٹرسے پوچھے گا مجھے بھی تو بتا

میرا شوہر کون ہوگا اس کا نام، اس کا پتا؟

ٹھیک اس وقت اک صدا آئے گی کمپیوٹر سے یوں

جیسے وہ کہتا ہو اس خدمت کو میں تیارہوں

شاعر: دلاور فگار

 (شعری مجموعہ"خدا جھوٹ نہ  بلوائے" :سال اشاعت،1989)

Aaj   Kal   K   Naojawaan   Bantay   To   Hen   Aashiq   Mizaaj

Un   Say   Kaisay   Ho  Ga   Adaa       Esahq-o-Muhabbat     Ka   Khiraaj

Aashqi   K   Raaz   Say   Thay   Meray   Aabaa   Aashnaa

Kohkan   Shereen   Ka   Aashiq  ,   Qais   Laila   Aashnaa

Yeh   Kisi    SAADI   Ka    Photo   Hay   Na    Tasveer-e-Damishq

Yeh   Miray    Daada   Hen    Jo    Daadi   Say    Farmaatay   Hen   Eshq

Ik    Alaamat    Hay   Yeh    Jhoola    Payaar   K    Izhaar   Ki

Dekhiay   Jhoolay   Men   Penghain    Barrh    Rahi   Hen   Payaar   Ki

Daada   Abba   Ga    Rahay   Hen    Aa   Gai   Saawan    Ki   Rut

Aor   Daadi    Iss    Tarah   Saakit    Hen    Jaisay    Koi   But

Phir    Yun    Hua    Ka    Rut   Badli   Jo    Iss    Barsaat   Ki

Meray    Abba    Jhool    Niklay    Shaakh    Par    Halaat   Ki

Aashqi   Uss    Daor   Men   Ik    Khaas   Culture    Ka   Tha   Naam 

Eid   K    Din    Likh   K    Jaata   Tha    Siwayyon   Par   Salaam

Ya   Kisi    Din    Dil    Men    Jab     Uthi    Muhabbat    Ki   Tarang

Apni    Mehbooba   K    Ghar   Men   Kaat   Di   Apni   Pitang

In   Dinon    Buss    Men   Nahen    Jaata   Tha   Yeh   Jaan-e-Bahaar

Paalki    Men    Mehwashon   Ko   Lay    K   Jaata y  Thay   Kohaar

In   Dinon   Kaanon   K   Bundon   Men   Lattak    Jaata   Tha   Dil

Chilmanon   Ki    Teelion   Tak    Men    Attak    Jaata   Tha   Dil

Ab   Bhi   Logon   Ko   Wo    HASRAT   Ka   Zamaana   Yaad   Hay

"Wo   Tira    Kothay   Pe    Nangay   Paaon   Aana    Yaad   Hay"

Nasl-e-Nao   Ka   Daor   Aaya   Hay   ,   Naey    Aashiq   Banay

Ab   Siwayyon   Ki   Jagah   Chalnay   Lagay   Chholay   Chanay

Shewa-e-Ushaaq   Ab   Baazi   Gari   Bannay   Laga

Eshq   Jo   Ik   Art    Tha   Industary   Bannay   Laga

In   K   Bachay   Bhi   Karen   Gay   Daor-e-Mustaqbil   Men   Eshq

Mukhtalif    Soorat    Say    Paida   Ho   Ga    Un    K   Dil   Men   Eshq

Eshq   Computer   Say   Poochhay   Ga   Mujhay   Yeh   To   Bataa

Kaya   Hay    Meray   B   Loard    Ka    Name    Aor    Ghar   Ka   Pataa

Uss   Ko   Computer   Say   Mill   Jaaey   Ga   Yeh   Musbat    Jawaab

Teri   Mehooba   Fulaan   Larrki   Hay   Kar   Lay   Intikhaab

Husn   Computer   Say   Poochhay   Ga   Mujahy   Bhi   To   Bataa

Mera   Shohar   Kon   Ho   Ga   Iss   Ka   Name  ,   Uss   Ka   Pataa?

Theek   Uss   Waqt    Ik   Sadaa   Aaey   Gi   Computer   Say   Yun

Jaisay    Wo    Kehta   Ho   Iss   Khidmat    Ko   Main   Tayyaar   Hun

Poet: Dilawar   Figar

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -مزاحیہ شاعری -