معروف شاعر ساقی امروہوی کا یومِ وفات(12دسمبر)

معروف شاعر ساقی امروہوی کا یومِ وفات(12دسمبر)
معروف شاعر ساقی امروہوی کا یومِ وفات(12دسمبر)

  

ساقی امروہوی:

نام سیدقائم رضا اور تخلص ساقیؔ تھا۔ 1925ء کو اترپردیش کے امروہا شہر میں پیدا ہوئے۔

ان کے والد سید علی قاسم اور دادا سید علی اسلم جاگیردار تھے۔ 

ساقیؔ کے والدین کی خواہش تھی کہ ان کا بیٹا پڑھ لکھ کر بڑا مقام حاصل کرے۔ جب وہ پڑھنے لکھنے کے قابل ہوئے تو لکھنا پڑھنا چھوڑ کر اکھاڑوں میں کشتی لڑنے اور مشاعروں میں جانے کا شوق پیدا ہو گیا۔ الغرض ساقیؔ شاعری کی طرف راغب ہو گئے۔ 

تقسیم ہند کے بعد ساقیؔ امروہوی ہجرت کر کے پاکستان چلے گئے اور کراچی میں مستقل رہائش اختیار کی۔ کراچی میں ذریعۂ معاش کی تلاش کے لئے سرگرداں رہے۔ تعلیم نہ ہونے کے سبب کوئی ملازمت وغیرہ نہ مل سکی۔ البتہ کچھ دن میونسپل کارپوریشن میں ملازم رہے۔ 

ساقیؔ امروہوی نے شاعری تو بچپن ہی سے شروع کر دی تھی لیکن باقاعدہ اصلاح پاکستان میں کہنہ مشق شاعر میر جواد علی سے لی۔ انہیں کو وہ اپنا استاد کہتے تھے۔ 

ساقیؔ امروہوی 12دسمبر 2005 کو کراچی میں انتقال کر گئے۔

نمونۂ کلام

منزلیں    لاکھ   کٹھن   آئیں    گُزر   جاؤں   گا 

حوصلہ  ہار  کے  بیٹھوں  گا  تو  مر  جاؤں  گا 

چل رہے تھے جو مرے ساتھ کہاں ہیں وہ لوگ 

جو  یہ کہتے  تھے کہ رستے میں بِکھر جاؤں گا 

در بدر  ہونے سے پہلے کبھی سوچا  بھی نہ تھا 

گھر  مجھے   راس  نہ  آیا  تو  کِدھر  جاؤں  گا 

یاد  رکھے  مجھے دنیا  تری  تصویر  کے  ساتھ 

رنگ   ایسے  تری   تصویر  میں  بھر  جاؤں  گا 

لاکھ   روکیں   یہ  اندھیرے   مرا   رستہ  لیکن 

میں جِدھر  روشنی  جائے  گی  اُدھر  جاؤں  گا 

راس   آئی   نہ   محبت   مجھے    ورنہ   ساقیؔ 

میں نے سوچا تھا کہ ہر دِل میں  اُتر  جاؤں  گا

شاعر: ساقی امروہوی

Manzalen   Laakh   Kathhan   Aaen   Guzar   Jaaun  Ga

Haosla   Haar   K   Baithun   Ga   To   Mar   Jaaun   Ga

 Chall   Rahay   Thay  Jo   Miray   Saath   Kahan   Hen   Wo   Log

Jo   Yeh   Kehtay   Thay   Keh   Rastay   Men   Bikhar   Jaaun  Ga

 Darbadar   Honay   Say   Pehlay   Kabhi   Socha   Bhi   Na   Tha

Ghar   Mujhay   Raas   Na   Aaya   To   Kidhar   Jaaun   Ga

 Yaad   Rakhay   Mujhay   Dunya   Tiri   Tasveer   K   Saath

Rang   Aisay   Tiri   Tasveer   Men   Bhar   Jaaun  Ga

 Laakh   Roken   Yeh   Andhairay   Mira   Rasta   Lekin

Main   Jidhar   Roshni   Jaaey   Gi   Udhar   Jaaun  Ga

 Raas   Aai   Na   Muhabbat   Mujhay   Warna   Saaqi

Main   Nay   Socha   Tha   Keh   Har   Dil   Men   Utar   Jaaun  Ga

Poet: Saqi    Amrohvi

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -