گِلے سے باز آیا جا رہا ہے 

 گِلے سے باز آیا جا رہا ہے 
 گِلے سے باز آیا جا رہا ہے 

  

 گِلے سے باز آیا جا رہا ہے 

 سو پیہم گُنگنایا جا رہا ہے 

 نہیں مطلب کسی پر طنز کرنا 

 ہنسی میں مسکرایا جا رہا ہے 

 وہاں اب میں کہاں اب تو وہاں سے 

 میرا سامان لایا جا رہا ہے 

 عجب ہے ایک حالت سی ہوا میں 

 ہمیں جیسے گنوایا جا رہا ہے 

 اب اُس کا نام بھی کب یاد ہوگا 

 جسے  ہر دم بُھلایا جا رہا ہے 

 چراغ اس طرح روشن کر رہا ہوں  

 کہ جیسے گھر جلایا جا رہا ہے 

 بَھلا تم کب چلے تھے یوں سنبھل کر 

 کہاں سے اُٹھ کے جایا جا رہا ہے 

 تو کیا اب نیند بھی آنے لگی ہے 

 تو بستر کیوں بچھایا جا رہا ہے

شاعر: جون ایلیا

Gilay Say Baaz Aaya Ja Raha Hay

So Paiham Gunganaaya Ja Raha Hay

nahen Matlab Kisi par Tanz Ka

hanzi Men Muskraaya Ja Raha Hay

Wahaan Ab Main Kahan Ab To Wahaan Say

Hansi Men Muskaraaya Ja Raha Hay

Ajab Hay Aik Haalat Si Hawaa Men

Hamen Jaisay Ganwaaya Ja Raha Hay

Ab Uss Ka Naame Bhi Kab Yaad Ho Ga

Jisay Har Dam Bhulaaya Ja Raha Hay

Charaagh  Iss Tarah Roshan Kar Raha Hun

Keh Jaisay Ghar Jalaaya Ja Raha Hay

Bhala Tum Kab Chalay Thay Yun Sanbhall Kar

Kahaan Say Uth K jaaya Ja Raha Hay

To Kia Ab Neend Bhi Aanay Lagihay

To Bistar Kiun Bichaaya Ja Raha Hay

Poet: Rawal Hussain

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -