دل کی تکلیف کم نہیں کرتے

دل کی تکلیف کم نہیں کرتے
دل کی تکلیف کم نہیں کرتے

  

دل کی تکلیف کم نہیں کرتے

اب کوئی شکوہ ہم نہیں کرتے

جانِ جاں تجھ کو اب تری خاطر

یاد ہم کوئی دَم نہیں کرتے

دوسری ہار کی ہوس ہے سو ہم

سرِ تسلیم خم نہیں کرتے

وہ بھی پڑھتا نہیں ہے اب دل سے

ہم بھی نالے کو نم نہیں کرتے

جرم میں ہم کمی کریں بھی تو کیوں

تم سزا بھی تو  کم نہیں کرتے

شاعر: جون ایلیا

Dil KI Takleef Kam Nahen Kartay

Ab Koi Shikwa  Ham Nahen Kartay

Jaan  e  Jaan Tujh Ko Ab Tiri Khaatir

Yaad Ham Koi Dam Nahen Kartay

Doosri Haar Ki Hawas Hay So HamSar 

Sar  Ko Tasleem  e  Kham Nahen Kartay

Wo Bhi Parhta Nahen Hay Ab Dil Say

Ham Bhi Naalay Ko Nam Nahen Kartay

Jurm Men Ham Kami Karen Bhi To Kiun

Tum Sazaa Bhi To Kam Nahen Kartay

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -