بڑا احسان ہم فرما رہے ہیں​

بڑا احسان ہم فرما رہے ہیں​
بڑا احسان ہم فرما رہے ہیں​

  

بڑا احسان ہم فرما رہے ہیں​

کہ انکے خط انہیں لوٹا رہے ہیں​

نہیں ترک محبت پر وہ راضی​

قیامت ہے کہ ہم سمجھا رہے ہیں​

یقیں کا راستہ طے کرنے والے​

بہت تیزی سے واپس آ رہے ہیں​

یہ مت بھولو کہ یہ لمحات ہم کو​

بچھڑنے کے لئے ملوا رہے ہیں​

تعجب ہے کہ عشق و عاشقی سے​

ابھی تک لوگ دھوکا کھا رہے ہیں​

تمہیں چاہیں گے جب چھن جاؤ گی تم​

ابھی ہم تم کو ارزاں پا رہے ہیں​

کسی صورت انہیں نفرت ہو ہم سے​

ہم اپنے عیب خود گنوا رہے ہیں​

وہ پاگل مست ہے اپنی وفا میں​

مری آنکھوں میں آنسو آ رہے ہیں​

دلیلوں سے اسے قائل کیا تھا​

دلیلیں دے کے اب پچھتا رہے ہیں​

تری بانہوں سے ہجرت کرنے والے​

نئے ماحول میں گھبرا رہے ہیں​

یہ جذبۂ عشق ہے یا جذبۂ رحم​

ترے آنسو مجھے رلوا رہے ہیں​

عجب کچھ ربط ہے تم سے کہ تم کو​

ہم اپنا جان کر ٹھکرا رہے ہیں​

وفا کی یادگاریں تک نہ ہوں گی​

مری جاں بس کوئی دن جا رہے ہیں​

شاعر: جون ایلیا

Barra Ehsaan Farmaa Rahay Hen

Keh Un K Khat Unhen Lotaa Rahay Hen

Nahen Tark  e  Muhabbat Par Wo raazi

Qayaamat hay Keh ham Samjha Rahay Hen

Yaqeen Ka Raasta Tay Karnay Waalay

bahut Tezi Say Waapas Aa Rahay Hen

Yeh Mat Bhoolo Keh Yeh Lamhaat Ham Ko

Bicharrnay K Liay Milwaa Rahay Hen

Taajubb Hay Keh Eshq  o Aashqi Say

Abhi Kuch Log Dhoka Kha Rahay Hen

Tumhen Chaahen Gay jab  Chhin Jaao GiTum

Abhi Ham Tum Ko Arzaan Paa Rahay Hen

Kisi Soorat Unhen Nafrat Ho Ham Say

ham Apnay Aib Khud Ginwaa Rahay Hen

Wo Paagal Mast Hay Apni Wafaa Men

Miri Aankhon Men Aansu Aa Rahay hen

Daleelon Say Usay Qaail Kia Tha

Daleelen Day K Pachtaa Rahay Hen

Tiri Bahon Say Hijrat Kar K

Naey mahol Men Ghabraa Rahay Hen

Yeh Jazba Eshq Hay ya Jazba  e  Rehm

Tiray Aansu Mujhay Rulwaa Rahay Hen

Ajab Kuch Rabt  Hay Tum Say Keh Tum Ko

Ham Apna Jaan Kar Thukraa Rahay Hen

Wafa Ki YaadgaarenTak Na Hon Gi

Miri Jaan Bass Koi Din, Jaa Rahay Hen

Poet: Jaun Elia

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -