بے اعتدالیوں سے سبک سب میں ہم ہوئے

بے اعتدالیوں سے سبک سب میں ہم ہوئے
بے اعتدالیوں سے سبک سب میں ہم ہوئے

  

بے اعتدالیوں سے سبک سب میں ہم ہوئے

جتنے زیادہ ہو گئے اتنے ہی کم ہوئے

پنہاں تھا دام سخت قریب آشیان کے

اڑنے نہ پائے تھے کہ گرفتار ہم ہوئے

ہستی ہماری اپنی فنا پر دلیل ہے

یاں تک مٹے کہ آپ ہم اپنی قسم ہوئے

سختی کشان عشق کی پوچھے ہے کیا خبر

وہ لوگ رفتہ رفتہ سراپا الم ہوئے

تیری وفا سے کیا ہو تلافی کہ دہر میں

تیرے سوا بھی ہم پہ بہت سے ستم ہوئے

لکھتے رہے جنوں کی حکایات خوں چکاں

ہر چند اس میں ہاتھ ہمارے قلم ہوئے

اللہ رے تیری تندی خو جس کے بیم سے

اجزائے نالہ دل میں مرے رزق ہم ہوئے

اہل ہوس کی فتح ہے ترک نبرد عشق

جو پانو اٹھ گئے وہی ان کے علم ہوئے

نالے عدم میں چند ہمارے سپرد تھے

جو واں نہ کھنچ سکے سو وہ یاں آ کے دم ہوئے

چھوڑی اسدؔ نہ ہم نے گدائی میں دل لگی

سائل ہوئے تو عاشق اہل کرم ہوئے

شاعر: مرزا غالب

Be Etdaalion Say Subak Sab Ham Huay

Jitnay Zayaad Ho Gaey Utnay Hi Kam Huay

Pinhaan tha Daam Sakht Qareeb Aashyaan K 

Urrnay Na Paaey Thay Keh Gariftaar Ham Huay

Hasti Hamaari Apni Fana Par Daleel Hay

Yaan Tak Maey Keh Aap Ham Apni Qasam Huay

Sakhti Kashaan e Eshq Ki Poochy Hay Haya Khabar

Wo Log Rafta  Rafta  Saraapa Alam Huay

Teri Wafa Say Kaya Ho Talaafi Keh Dehr Men

Teray Siwa Bhi Ham Pe Bahut Say Sitam Hauy

Likhaty Rahay Junoon Ki Hikaayaat e Khoonchkaan

Harchand iss Men Haath Hamaaray Qalam Huay

ALLAH Ray Teri Tundi e khoo Jiss K beem Say

Ajzaa e Nala e Dil Men Miray Rizq Ham Huay

Ehl e Hawas Ki Fatah HayTark e Nabard e Ehq

Jo Paaon Uth Gaey Wahi Un K Alam Huay

Naalay Adam Men Chand Hamaaray Sapurd Thay

Jo Waan Na Khich Sakay Wo Wo Yaan Aa K Dam Hauy

Chorri ASAD Na Ham Nay Gadaai Men Dil Laghi 

Saail Huay To Aashq e Ehl e Karam Huay

Poet:Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -