اردو کے عظیم مرثیہ نویس شاعرمیر انیس کا یومِ وفات(10دسمبر)

اردو کے عظیم مرثیہ نویس شاعرمیر انیس کا یومِ وفات(10دسمبر)
اردو کے عظیم مرثیہ نویس شاعرمیر انیس کا یومِ وفات(10دسمبر)

  

میر انیس:

ان کا مکمل نام میر ببر علی انیس تھا۔ 1803 ء میں فیض آباد(اترپردیش)میں پیدا ہوئے۔ خاندانِ سادات سے تعلق رکھتے تھے۔وہ معروف اردو مرثیہ نگار تھے۔ میر مستحسن خلیق ان کے والد اور مثنوی سحرلبیان کے خالق میر غلام حسین حسن دادا تھے۔ ابتدا میں غزل کہی لیکن جب مرثیہ کہنا شروع کیا تو دیگر اصناف پر توجہ ہی نہ دی۔ انہوں نے مرثیہ نگاری کو بام عروج پر پہنچایا۔ان کے بعد اس صنف نے اس پائے کا کوئی شاعر پیدا نہیں کیا۔ ان کی وفات ۰۱دسمبر1874ءکو لکھنو میں ہوئی۔

نمونۂ کلام

آج شبیرؔ پہ کیا عالمِ تنہائی ہے 

ظلم کی چاند پہ زہراؔ کی گھٹا چھائی ہے 

اس طرف لشکرِ اعدا میں صف آرائی ہے 

یاں نہ بیٹا نہ بھتیجا نہ کوئی بھائی ہے 

برچھیاں کھاتے چلے جاتے ہیں تلواروں میں 

مار لو پیاسے کو ہے شور ستمگاروں میں 

گیسو آلودۂ خوں لپٹے ہیں رخساروں سے 

شانے کٹ کٹ کے لٹک آئے ہیں تلواروں سے 

تیرہ پیوست ہیں خوں بہتا ہے سوفاروں سے 

لاکھ آفت میں ہے اک جان دل آزاروں سے 

فکر ہے سجدۂ معبود ہیں سر دینے کی 

دار سے تیغوں کے فرصت نہیں، دم لینے کی 

برچھی آ کر کوئی پہلو میں لگا جاتا ہے 

مارتا ہے کوئی نیزہ تو غش آجاتا ہے 

بڑھتے ہیں زخمِ بدن، زور گھٹا جاتا ہے 

بند آنکھیں ہیں، سرِ پاک جھکا جاتا ہے 

گردِ زہراؔ و علیؔ گریہ کناں پھرتے ہیں 

غل ہے گھوڑے سے امام دو جہاں گرتے ہیں 

 کوئی سید کا نہیں آہ، بچانے والا 

حربے لاکھوں ہیں، اور اک زخم اٹھانے والا 

پیاس میں کوئی نہیں، پانی پلانے والا 

سنبھلے کس طرح بھلا، برچھیاں کھانے والا 

چرخ سے آگ برستی ہے زمیں جلتی ہے 

مارے گرمی کے زباں خشک ہے، لُو چلتی ہے 

  

عرض کرتے ہیں یہ خالق سے کہ اے ربِ غفور! 

تو ہے عالم کہ نہیں کچھ ترے بندے کا قصور 

کرتے ہیں یہ مجھے بے جرم و خطا تیغوں سے چور 

ہاتھ امت پہ اٹھانا نہیں مجھ کو منظور 

جانتے ہیں کہ محمدؔ کا نواسا ہوں میں 

پانی دیتے نہیں دو روز کا پیاسا ہوں میں 

 غم نہیں کچھ مجھے گو بیکس و بے یار ہوں میں 

زیرِ شمشیر گلا رکھنے کو تیار ہوں میں 

تو مددگار ہے، مختار ہے لاچار ہوں میں 

وقتِ مشکل ہے، عنایت کا طلبگار ہوں میں 

تیرے سجدے میں یہ سر تن سے جدا ہو جاوے 

عہدِ طفلی کا جو وعدہ ہے، وفا ہو جاوے 

رحم کر رحم کر شرمندہ ہوں اے یارِ خدا 

بندگی کا ترے جو حق تھا ادا ہو نہ سکا 

خوفِ محشر سے، بدن کانپتا ہے، سرتاپا 

ہوگی اعمال کی پرسش تو، کہوں گا میں کیا؟ 

کوئی تحفہ ترے لائق نہیں پاتا ہے حسینؔ 

ہاتھ خالی ترے دربار میں آتا ہے حسینؔ 

  

عرض کرتے تھے یہ خالق سے شۂ بندہ نواز 

یک بیک عالمِ بالا سے یہ آئی آواز 

اے مرے شیر کے فرزند، نبی کے دمساز 

تجھ سے ہم خوش ہیں پذیرا ہے ترا عجر و نیاز 

مرد ہے عاشقِ کامل ہے، وفادار ہے تو 

جو کہا وہ ہی کیا صادق الاقرار ہے تو 

تو بھی مقبول ہے اور تیری عبادت بھی قبول 

یہ اطاعت بھی ہے مقبول، یہ طاعت بھی قبول 

عاجزی بھی تری مقبول، شہادت بھی قبول 

تیری خاطر سے ہمیں بخششِ امت بھی قبول 

ہم نے خیل شہدا کا تجھے سردار کیا 

امتِ احمد مختار کا مختار کیا 

دوست داروں کا ترے گلشنِ جنت ہے مقام 

تاابد سایۂ طوبیٰ میں کریں گے آرام 

ہوں گے محشور ترے ساتھ عزادار تمام 

تجھ کو جو روئیں گے آنچ ان پہ ہے دوزخ کی حرام 

غم نہ کھا! اہلِ جہاں تیرے محب سارے ہیں 

تو ہے پیارا، ترے پیارے میں بھی ہمیں پیارے ہیں 

تجھ سا عابد نہ ہوا ہے، نہ کوئی ہووے گا 

تیر کھا کھا کے کسی نے بھی ہے یوں شکر کیا 

طاعتِ خلق سے اک سجدہ ہے افضل تیرا 

عرشِ اعظم پہ، ملائک تری کرتے ہیں ثنا 

سارا گھر میری محبت میں، فنا تو نے کیا 

بندگی کا تھا جو کچھ حق وہ ادا تو نے کیا 

یہ صدا سن کے ہوئے شاد شۂ ہر دوسرا 

آ گئی از سرِ نو جسم میں طاقت گویا 

جھک کے سجدے کی طرف عجز سے رو کر یہ کہا 

میرے مولا میں تری بندہ نوازی کے فدا 

کیوں نہ ممتاز ہو وہ تو جسے رتبہ بخشے 

اس کفِ خاک کو کیا رتبۂ اعلیٰ بخشے 

ابھی مولا نے سرِ عجز اٹھایا نہ تھا آہ 

نیزہ اک چھاتی پہ مارا جو کسی نے ناگاہ 

غش میں گرنے لگے گھوڑے سے امامِ ذی جاہ 

آئی خاتونِ قیامت کی صدا بسم اللہ 

تھامنے آئے علیؔ خلد سے گھبرائے ہوئے 

دوڑے محبوبِ خدا ہاتھوں کو پھیلائے ہوئے 

اک جفا کیش نے پھر پہلو پہ نیزہ مارا 

چھد گیا توڑ کے چھاتی کو کلیجہ سارا 

پشتِ تازی پہ، سنبھلنے کا نہ پایا یارا 

گر پڑا خاک پہ، وہ عرشِ خدا کا تارا 

گرد آلود قبائے شۂ پرنور ہوئی 

ریت زخموں کے لیے مرہم کافور ہوئی 

خاک و خوں میں جو تڑپتے تھے ، شہنشاہِ زمن 

گل کے مانند کھلے جاتے تھے سب زخمِ بدن 

طلبِ آب میں کھولے ہوئے تھے خشک دہن 

گرد کھینچے ہوئے تلواریں کھڑے تھے دشمن 

غمِ ناموس بھی تھا، پیاس کی بھی شدت تھی 

پھر سکینہؔ کو نہ دیکھ آئے یہی حسرت تھی 

  

ایسے مظلوم کا، سر کاٹنا کیا ہے دشوار 

جس کا کوئی بھی مددگار، نہ ہمدرد، نہ یار 

عورتیں ہیں کئی خیمے میں غریب و ناچار 

مر چکے پہلے ہی جو خون کے تھے دعویدار 

خوں بہا بھی نہ کوئی مانگنے کو آوے گا 

اک پسر ہے سو وہ بیمار ہے مرجاوے گا 

شاعر : میر انیس

Aaj   SHABBIR   Pe   Kaya   Aalam-e-Tanhaai   Hay

Zulm   Ki   Chaand   Pe   Zahara   Ki   Ghatta   Chhaai   Hay

Uss   Taraf   Lshkar-e-Adaa   Men   Saf   Araai   Hay

Yaan   Na   Baita   Na   Bhateeja   Na   Koi   Bhai   Hay

Barchhiyaan   Khaatay   Chalay   Jaatay   Hen   Talwaaron   Men

 Maar   Lo   Payaasay    Ko   Hay   Shor   Sitamgaaron   Men

 Gaisu  Aaluda-e-Khoon   Liptay   Hen   Rukhsaaron   Say

Shaanay   Katt   Katt   K   Lattak   Aaey   Hen   Talwaaron   Say

Tera   Paiwast   Hen   Khoon    Behta   Hay   Sofaaron   Say

Laakh   Aafat   Men   Hay   Ik   Jaan   Dil   Azaaron   Say

Fikr   Hay   Sajda-e-Mabood   Hen   Sar   Dainay   Ki

  Daar   Say   Taighon   K   Fursat   Nahen  ,   Dam   Lainay   Ki

 Barchhi   Aa   Kar   Koi   Pehlu   Men   Lagaa   Jaata   Hay

Maarta   Hay   Koi   Naiza   To   Ghash   Aa   Jaata   Hay

Barrhtay   Hen   Zakhm-e-Badan   ,   Zor   Ghatta   Jaata   Hay

Band   Aankhen   Hen   ,   Sar -e-Paak   Jhuka   Jaata   Hay

Gard-e-ZAHRA -o-ALI   Girya   Kunaan   Phirtay   Hen

Ghull   Hay   Ghorray   Say   IMAAM -e-Do   Jahaan   Girtay   Hen

 Koi   Sayyad  Ka   Nahen   Aah   Bachaanay   Waala

Harbay   Laakhon   Hen   ,   Aor   Ik   Zakhm   Uthaanay   Waala

Payaas   Men   Koi   Nahen  ,   Paani   Pilaanay   Waala

Sanbhlay   Kiss   Tarah   Bhala  ,   Barchiyaan   Khaanay   Waala

Charkh   Say   Aag   Barasti   Hay   Zameen   Jalti   Hay

Maaray   Garmi   K   Zubaan   Khushk   Hay   Lao   Chalti   Hay

 

Arz   Kartay   Hen   Yeh   Khaliq   Say   Keh   Ay   Rab-e-Ghafoor

Tu   Hay   Aalam   Keh   Nahen   Kuchh   Tiray   Banday   Ka   Qasoor

Kartay   Hen   Yeh   Mujhay   Be   Jurm -o-Khata   Taighon   Say   Choor

Haath   Ummat   Pe    Uthaana   Nahen    Mujh   Ko   Manzoor 

Jaantay   Hen   Keh   MUHAMMAD   Ka   Nawaasa   Hun   Main

Paani   Daitay   Nahen   Do   Roz   Ka   Payaasa   Hun   Main

 Gham   Nahen   Kuchh   Mujh   Ko   Baikas-o-Be   Yaar   Hun   Main

Zer-e-Shamsheer   Gala   Rakhnay   Ko   Tayyaar   Hun    Main

Tu   Madadgaar   Hay  ,   Mukhtaar    Hay   Lachaar   Hun   Main

Waqt-e-Mushkill   Hay   ,   Enaayat   Ka   Talabgaar   Hun   Main

Teray   Sajday   Men   Yeh   Sar   Tan   Say   Juda   Ho   Jaaway

Ehd-e-Tifli   Ka   Jo   Waada   Hay  ,   Wafa   Ho   Jaaway

 Rehm   Kar   Rehm   Kar   Sharminda    Hun   Ay   Yaar-e-Khuda

Bandagi   Ka   Tiray   Jo   Haq   Tha   Adaa   Ho   Na   Saka

Khaof -e-Mehshar   Say   ,   Badan   Kaanpta   Hay  ,   Sar   Ta   Paa

?Ho   Gi   Amaal   Ki   Pursish   To   ,   Kahun   Ga   Main   Kaya

Koi   Tohfa   Tiray   Laaiq   Nahen   Paata   Hay   HUSSAIN

Haath   Khaali   Tiray   Darbaar   Men  Aata   Hay   HUSSAIN

 Arz   Kartay   Thay   Yeh   Khaliq   Say   Shah-e-Banda   Nawaaz

Yak   Bayak   Aalam-e-Baala   Say   Yeh   Aai   Awaaz

Ay   Miray   SHAIR   K    Farzand  ,   NABI   K   Damsaaz

Tujh   Say   Ham   Khush   Hen   Pazeera   Hay   Tira   Ijz-o- Nayaaz

Mard   Hay   Aashik-e-Kaamil   Hay  ,   Wafadaar   Hay  Tu

Jo   Kaha   Wo   Hi   Kiya   Saadiq -ul-Iqraar   Hay   Tu

 Tu   Bhi   Maqbool   Hay   Aor   Teri    Ibaadat   Bhi   Qabool

Yeh   Ataat   Bhi   Hay   Qabool  ,   Yeh   Taat   Bhi   Qabool

Aajzi   Bhi   Tiri  Qabool  ,   Shahaadat   Bhi   Qabool

Teri   Khaatir   Say   Hamen   Bakhsh-e-Ummat   Bhi   Qabool

Ham   Nay   Khail   Shohadaa   Ka   Tujhay   Sardaar   Kiya

Ummat-e-AHMAD-e-Mukhtaar   Ka   Mukhtaar   Kiya

 Dost   Daron   Ka   Tiray   Gulshan-e-Jannat   Hay   Maqaam

Ta   Abad   Saaya-e-Tooba   Men   Karen   Gay   Araam

Hun   Gay   Mehshoor   Tiray   Saath   Azadaar   Tamaam

Tujh   Ko   Roen   Gay   Aanch   Un   Pe   Hay   Dozakh   Ki   Haraam

Gham   Na   Kha   Ehl-e-Jahaan   Teray   Muhibb   Saaray   Hen

Tu   Hay   Payaara  ,   Tiray   Payaaray   Men   Bhi   Hamen   Payaaray   Hen

 Tujh   Sa   Abid   Na   Hua   Hay  ,   Na   Koi   Howay  Ga

Teer   Kha   Kha   K   Kisi   Nay   Bhi   Hay   Yun   Shukr   Kiya

Taat-e-Khalq   Say   Ik   Sajda   Hay   AFzal   Tera

Arsh-e-Azam   Pe  ,   Malaaik   Tiri   Kartay   Hen   Sana

Saara   Ghar   Meri   Muhabbat   Men  ,   Fana   Tu   Nay   Kiya

Bandagi    Ka   Tha   Jo   Haq   Wo   Adaa   Tu   Nay   Kiya

 Yeh   Sdaa   Sun   K   Huay   Shaad   Shah-e-Har   Do   Saraa

Aa   Gai   Az   Sar-e-Nao   Jism   Men   Taaqat   Goya

 Jhuk   K   Sajday   Ki   Taraf   Ijz   Say   Ro   Kar   Yeh   Kaha

Meray   Maola   Men   Tiri   Banda   Nawaazi   K   Fida

Kiun   Na   Mumtaz   Ho   Wo   Tu   Jisay   Rutba    Bakhshay

Iss   Kaf-e-Khaak   Ko   Kaya   Rutba-e-Aala   Bakhshay

 Abhi   Maola   Nay   Sar-e-Ijz   Uthaaya   Na   Tha   Aah

Naiza   Ik   Chhaati   Pe   Maara   Jo   Kisi   Nay   Nagaah

Ghash   Men   Girnay   Lagay   Ghorray   Say   Imam-e-Zi   Jaah

Aai   Khatoon-e-Qayamat   Ki   Sadaa   Bismillah

Thaamnay   Aaey   ALI   Khuld   Say   Ghabraaey   Huay

Daorray   Mehboob-e-KHUDA   Haathon    Ko   Phialaaey   Huay

 Ik   Jafa    Kaish   Nay   Phir   Paihlu   Pe   Naiza   Maara

Chhid   Gaya   Torr   K   Chhaati   Ko   Kalaija   Saara

Pusht-e-Taazi    Pe   ,   Sanbhalnay   Ka   Na   Paaya   Yaara

Gir   Parra   Khaak   Pe  ,   Wo   Arsh-e-Khuda   Ka   Taara

Gard   Alood   Qabaa-e-Shah-e-Pur   Noor   Hui

Rait   Zakhmon   K   Liay   Marham-e-Kafoor   Hui

 Khaak -o-Khoon   Men   Tarraptay   Thay  ,   Shahinsha-e-Zaman

Gul   K   Maanind    Khulay   Jaatay   Thay   Sab   Zakhm-e-Badan

Talab-e-Aab   Men   Kholay   Huay   Thay   Khushk   Dahan

Gard   Khainchay   Huay   Talwaaren   Kharray   Thay   Dushman

Gham-e-Namoos   Tha  ,   Payaas   Ki   Bhi   Shiddat   Thi

Phir   SAKEENA   Ko   Na   Daikh   Aaey   Yahi   Hasrat   Thi

 Aisay   Mazloom   Ka   Sar   Kaatna   Kaya   Hay   Dushwaar

Jiss   Ka   Koi   Bhi   Madadgaar  ,   Na   Hamdard  ,   Na   Yaar

Aorten   Hen   Kai   Khaimay   Men   Ghareeb-o-Na   Chaar

Mar   Chukay   Pehlay   Hi   Khoon   K   Dawaydaar

Khoon   Baha   Bhi   Na   Koi   Maangnay   Ko   Aaway   Ga

Ik   Pisar   Hay   So   Wo   Bemaar   Hay   Mar   Jaaway   Ga

Poet: Meer   Anees 

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -