تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوقِ نظر ملے

تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوقِ نظر ملے
تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوقِ نظر ملے

  

تسکیں کو ہم نہ روئیں جو ذوقِ نظر ملے

حوران خلد میں تری صورت مگر ملے

اپنی گلی میں مجھ کو نہ کر دفن بعدِ قتل

میرے پتے سے خلق کو کیوں تیرا گھر ملے

ساقی گری کی شرم کرو آج ورنہ ہم

ہر شب پیا ہی کرتے ہیں مے جس قدر ملے

تجھ سے تو کچھ کلام نہیں لیکن اے ندیم

میرا سلام کہیو اگر نامہ بر ملے

تم کو بھی ہم دکھائیں کہ مجنوں نے کیا کیا

فرصت کشاکشِ غمِ پنہاں سے گر ملے

لازم نہیں کہ خضر کی ہم پیروی کریں

جانا کہ اک بزرگ ہمیں ہم سفر ملے

اے ساکنان کوچۂ دلدار دیکھنا

تم کو کہیں جو غالبؔ آشفتہ سر ملے

شاعر: مرزا غالب

Taskeen Ko Ham Na Roen Jo Zoq e Nazar Milay

Hooraan e Khul Men Tiri Soorat Agar Milay

Apni Gali Men Mujh Ko Na Kar Dafn Baad e Qatl

Meray Patay Say Khalq Ko Kiun Tera Ghar Milay

Saaqi gari Ki Sharm Kro Aaj Warna Ham

Har Shab Piaa Hi Kartay Hen May Jiss Qadar Milay

Tujh Say Kuch Kalaam Nahen Lekin Ay Nadeem

Mera Salaam Kahio Agar Naam Bar Milay

Tum Ko Ham Dikhaaen Keh Majnoon Nay Kaya Kia

Fursat Kashaakash e Gam e Pinhaan Say Gar Milay

Laazim Nahen Keh Khizr Ki Ham Pairvi karen

Jaana Keh Ik Bazurg Hamen Ham Safar Milay

Ay Sakanaan e Kooch e Dildaar Dekhna

Tum Ko Kahen Jo GHALIB e Aashufta Sar Milay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -